جمعہ 27 ذوالحجہ 1442ﻫ - 6 اگست 2021

صدر ٹرمپ امریکی معیشت کھولنے کو بیتاب مگر حالات اجازت دینے سے انکاری

نیویارک ( رپورٹ: محمد فرخ)کورونا وائرس کی وجہ سے امریکہ کو اپنی تاریخ کی بدترین معاشی صورتحال کا سامنا ہے ایک طرف امریکہ کورونا سے اموات اور متاثرین کے اعتبار سے دنیا بھر میں سب سے بڑا مرکز بن چکا ہے دوسری طرف امریکہ کی معیشت کو جنگ عظیم دوم اور گریٹ ڈپریشن سے کہیں زیادہ تباہی کا سامنا ہے. ریکارڈ تعداد میں لوگ ان ائمپلائمنٹ( unemployment) کے لئے درخواستیں دے چکے ہیں.دوسری طرف کاروباری حلقوں کی جانب سے قرضوں کے لئے درخواستوں کا سونامی امڈ آیا ہے. ان حالات میں بھی صدر ڈونلڈ ٹرمپ جلد از جلد لاک ڈاؤن میں نرمی اور معیشت کھولنے کے لئے پر عزم ہے. اگرچہ کوئی ٹائم فریم کا تعین نہیں کیا گیا مگر صدر ٹرمپ منگل کے روز (13 اپریل) ایک نئی ٹاسک کے قیام کا اعلان کریں گے جو معیشت دوبارہ کھولنے کے لیے ٹائم فریم کے حوالے سے تجویز دے گی.وائیٹ ھاؤس کی نئی ٹاسک فورس ٹیم کاروباری افراد اور پروفیشنل پر مشتمل ھوگی جو مختلف ماہرین، کورونا کی صورتحال اور زمینی حقائق کا جائزہ لیکر مشورے دے گی. وائیٹ ھاؤس کے زرائع کے مطابق صدر ٹرمپ جنہوں نے گزشتہ ماہ اپریل کی 14 تاریخ یعنی ایسٹر پر لاک ڈاؤن ختم کرنے کا اعلان کیا ہے تاھم کورونا کی بگڑتی صورتحال میں ایسا ممکن نہ ہوسکا اب انہوں نے 30 اپریل کی ڈیڈ لائن تجویز کی ہے اور نئی ٹاسک فورس اس کو مدنظر رکھتے ھوئے مشاورت کرے گی.تاھم صدر ٹرمپ کی وائیٹ ھاؤس کورونا ٹاسک فورس کے ممبر میڈیکل ایکسپرٹ ڈاکٹر انتھونی فاشی نے معیشت کھولنے کے حوالے سے حتمی ٹائم ٹیبل دینے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ وہ نہیں سمجھتے کہ نومبر سے پہلے صورتحال معمول پر آئے گی.

یہ بھی دیکھیں

سعودی عرب: دہشت گردی میں ملوّث داعش کے پانچ مشتبہ ارکان کو سزائے موت کا حکم۔ 

سعودی عرب: دہشت گردی میں ملوّث داعش کے پانچ مشتبہ ارکان کو سزائے موت کا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے