ہفتہ 10 ربیع الاول 1443ﻫ - 16 اکتوبر 2021

پنجاب حکومت کورونا کنٹرول کرنے میں ناکام، کورونا کے مریضوں کی اصل تعداد چھپانے کی کوشش

لاہور، کورونا وائرس پاکستان میں تیزی سے پھیلنے لگا۔ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کے اٹھائے گئے حفاظتی اقدامات ناکافی نظر آنے لگے۔ قومی سلامی کو مد نظر رکھتے ہوئے انتہائی ایمرجنسی حفاظتی اقدامات کی طرف بڑھنا لازمی ہو گیا۔

انتہائی باوثوق ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ کورونا ٹیسٹ مثبت آنے پر چھپائے جا رہے ہیں، کورونا رپورٹ مریض کو تین سے چار دن بعد دی جا رہی ہے۔ جس کی وجہ سے کورونا کے کیس رپورٹ نہیں ہو رہے۔ کیس رپورٹ ہونے تک وہ مریض اور کئی سو افراد کو کورونا ٹرانسفر کر رہا ہے۔

اس وقت صرف لاہور شہر میں 40 سے زائد صحافی مختلف ہسپتالوں میں داخل ہیں جن میں سے پانچ کی حالت نازک بتائی جا رہی ہے۔ ان کے علاوہ سینکڑوں صحافیوں کی زندگیاں حفاظتی کٹس نہ ہونے کے باعث خطرے میں ہیں۔ صحافتی اداروں میں جو کیسز کورونا کے سامنے آرہے ہیں انکو رپورٹ کرنے سے بھی روکا جا رہا ہے۔

واضح رہے کہ کورونا کیسز کی بتدائی رپورٹس میں سندھ میں کورونا کے کیسز پنجاب سے زیادہ تھے جبکہ اس وقت پنجاب میں سندھ سے زیادہ کیسز رپورٹ ہو چکے ہیں۔

یہ بھی دیکھیں

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے لگا۔ 

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے