منگل 1 رمضان 1442ﻫ - 13 اپریل 2021

زکوٰة فنڈ زسے تنخواہیں دینا درست نہیں ہے ،مفتی محمد نعیم

کراچی، جامعہ بنوریہ عالمیہ سائٹ کے رئیس وشیخ الحدیث مفتی محمد نعیم نے کہاکہ زکوٰة فنڈ سے ملازمین کو تنخواہین دینادرست نہیں ہے ،اس سے غرباء اور مستحقین کا حق مارا جائے گا، زکوٰة کے مصارف میں مسلمان ہونے کی شرط کے ساتھ مستحق ہونا بھی ہے ،زکوٰ ة، صدقات اورصدقات واجبہ ادائیگی کی طرح مستحقین تک پہنچانابھی واجب ہے ۔

جامعہ بنوریہ عالمیہ میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مفتی محمد نعیم نے زکوٰة اسلام کے پانچ بنیادی ارکان میں سے بنیادی رکن اور مالی عبادات میں سب سے اہم عمل ہے اس کے بنیادی ارکان شریعت نے خود متعین کرکے دیے ہیں،جہاں زکوٰة دینے والوں کے لیے شرائط مقرر فرمائی ہیں، وہاں زکوة لینے والے بھی خود ہی بتلائے ہیں جن کے علاوہ کے لوگوں کو دینے سے ادا ہی نہیں ہوگی۔انہوںنے کہاکہ کرونا فنڈز میںزکوٰة دینا بھی درست نہیں کیونکہ جہاں ملکیت نہیں وہی پر اس کے استعمال بھی متعین نہیں ہے،انہوںنے کہاکہ زکوٰة اور صدقات واجبہ کا استعمال صرف مسلمانوں پر ضروری اس کے علاوہ غیر مسلموں کو صدقہ نافلہ دیا جاسکتاہے تاکہ وہ اسلام کے حسن اخلاق سے متاثر ہوسکے ہیں۔انہوںنے کہاکہ زکوٰة کوئی ہدیہ،معاوضہ بدلہ نہیں ہے، نہ ہی یہ ایسی چیز ہے جسے مفادِ عامہ کے ایسے رفاہی کاموںمیں خرچ کیا جاسکے جن سے عامة الناس کے فقیر وغنی فائدہ اٹھا سکیں ،نہ ہی اس کے لیے استعمال کی عام اجازت دینا کافی ہے بلکہ اس میں مستحق زکوٰة کو غیر مشروط طور پر مالک بنا کر اس کا قبضہ کرادینا لازمی ہے جسے مالک بن کر جس طرح چاہے وہ بلا روک ٹوک خرچ کرسکے۔

یہ بھی دیکھیں

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے لگا۔ 

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے