بدھ 25 ذوالحجہ 1442ﻫ - 4 اگست 2021

چیف سیکریٹری سندھ سید ممتاز علی شاہ اور وزیر خوراک کی زیر صدارت گندم خریداری کے متعلق اہم اجلاس سندھ سیکریٹریٹ میں منعقد ہوا

کراچی، چیف سیکریٹری سندھ سید ممتاز علی شاہ اور وزیر خوراک کی زیر صدارت گندم خریداری کے متعلق اہم اجلاس سندھ سیکریٹریٹ میں منعقد ہوا، اجلاس میں سیکریٹری خوراک لئق احمد سمیت تمام ڈویژنل کمشنرز اور ڈپٹی کمشنر نے وڈیو لنک کے ذریعے شرکت کی۔ اجلاس میں تمام ڈویژنل کمشنرز نے گندم خریداری کے متعلق آگاہی دی، اجلاس میں بتایا گیا کے حیدرآباد ڈویژن میں 90 فیصد، میرپور خاص میں 87 گندم خریداری ٹارگیٹ مکمل کیا گیا ہے۔ سکھر میں 89، لاڑکانہ میں 92، جب کے شہید بینظیر آباد میں 80 فیصد گندم خریداری کا ٹارگٹ مکمل کرلیا گیا ہے۔ اجلاس میں کمشنر شہید بینظیر آباد نے بتایا کہ ڈویژن کے مختلف شیروں میں گودام سے 2 لاکھ بوریاں برآمد کی ہیں، چیف سیکریٹری سندھ سید ممتاز علی شاہ نے تمام ڈویژنل کمشنرز کو ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ وہ گندم خریداری کے ٹارگیٹ کو 3 روز میں مکمل کریں۔ انہونے کہا کہ گوداموں سے سیل کی گئی گندم کو خریداری میں شامل کیا جائے۔ چیف سیکریٹری سندھ نے سیکریٹری خوراک کو ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ وہ شہید بینظیر آباد جائیں اور سیل کی گئی تمام گندم کو محکمہ خوراک کی گندم قرار دینے کے اقدامات کریں۔ ممتاز علی شاہ نے کمشنر سکھر اور کمشنر لاڑکانہ کو ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ گندم کی بین الصوبائی ٹرانسپورٹ پر پابندی ہے اس لئے گندم کی اسمگلنگ کو ہر صورت روکا جائے اور صوبے کی کے گندم خریداری کے ٹارگیٹ کو پورا کیا جائےن۔ چیف سیکریٹری سندھ سید ممتاز علی شاہ نے سیکریٹری خوراک کو ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ گندم کے ٹرانسپورٹ کے ٹینڈر جلد کئے جائیں اور گندم اٹھا کر محکمہ خوراک کے گودام میں رکھی جائے، اجلاس میں صوبائی وزیر خوراک نے کہا کہ فلور ملز کو صرف 30 ہزار بوریاں رکھنے کی اجازت ہین۔ کوٹہ سے زائد گندم کو سیل کیا جائے۔

یہ بھی دیکھیں

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے لگا۔ 

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے