بدھ 25 ذوالحجہ 1442ﻫ - 4 اگست 2021

وفاقی کابینہ کا شوگر انکوائری کمیشن کی رپورٹ پبلک کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد، وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کا خصوصی اجلاس ہوا۔ جس میں چینی بحران پر تحقیقاتی کمیشن کی رپورٹ پیش کی گئی، اجلاس میں کابینہ نے شوگر انکوائری کمیشن کی رپورٹ پبلک کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے رپورٹ میں ذمہ قرار دیے جانے والوں کے خلاف کیسز نیب اور ایف آئی اے کو بھجوانے کا فیصلہ کیا ہے، کابینہ نے مفادات کے ٹکراؤ کا قانون جلد نافذ کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔

ذرائع کے مطابق شوگر انکوائری کمیشن رپورٹ میں 9 ملوں کو ذمےدار ٹھہرایا گیا ہے۔ ‏رپورٹ میں جہانگیر ترین، عمرشہر یار اور مونس الہٰی کو ذمے دار قرار دیا گیا ہے۔ ‏رپورٹ میں اومنی گروپ کو بھی ذمے دار ٹھہرایا گیا ہے۔

رپورٹ میں ‏شوگر اسکینڈل میں ملوث افراد سے ریکوری کرنےکی بھی سفارش اور شوگراسیکنڈل میں ملوث افراد کیخلاف فوجداری مقدمات درج کرنےکی بھی سفارش کی گئی ہے۔ ‏چینی تحقیقاتی رپورٹ کامعاملہ جلد نیب کوبھی بھیجنے کا فیصلہ، ذرائع

وزیراعظم کے معاون خصوصی شہباز گل نے ٹوئٹ میں کہا کہ کابینہ اجلاس میں طے ہوگیا ہے کہ جب تک عمران خان وزیراعظم ہیں کوئی عوام کو لوٹ نہیں سکتا، وہ وقت گیا جب وزیراعظم اور کابینہ مل کر غریب دشمن اقدامات کرتے تھے، سخت ترین دباؤ کے باوجود کپتان آج غریب کے لیے ڈٹ کر کھڑا پے۔

ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ ایف آئی اے نے چینی اسکینڈل کا فرانزک آڈٹ مکمل کیا تھا جس میں ٹیکسوں کی مد میں اربوں روپے کے فراڈ کا انکشاف ہوا ہے اور بتایا گیا ہے کہ شوگر مافیا کا تعلق تمام بڑی سیاسی جماعتوں کے ساتھ ہے۔ ملک میں چینی کے بحران پر وزیراعظم عمران خان کی جانب سے ڈی جی ایف آئی اے واجد ضیاء کی سربراہی میں تحقیقاتی کمیٹی قائم کی گئی تھی۔

یہ بھی دیکھیں

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے لگا۔ 

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے