اتوار 6 رمضان 1442ﻫ - 18 اپریل 2021

سپریم کورٹ میں سینٹورس مال تجاوزات کیس کی سماعت

میئراسلام آباد شیخ انصر عزیز عدالت میں پیش

آپ ساڑھے 4 سال سے میئر اسلام آبادہیں،چیف جسٹس

یہ بتائیں کہ ساڑھے 4 سال میں آپ نے شہر کیلئے کیا کیا،چیف جسٹس

کیاآپ نےشہرکیلئےکوئی ایک منصوبہ بھی دیا ہے،چیف جسٹس

میں گزشتہ 3 سال سے ہر سال نیا منصوبہ بنا کر وفاقی حکومت کو دے رہا ہوں،میئر اسلام آباد

بیوروکریسی اسلام آباد میں انتخابات نہیں چاہتی تھی اسی وجہ سےکام نہیں کرنے دیا جا رہا،میئر اسلام آباد

کیا وزارت داخلہ سے کوئی عدالت میں موجود ہے،چیف جسٹس

میئر صاحب چیئرمین سی ڈی اے بھی رہ چکے ہیں،وفاقی سیکریٹری داخلہ

اب تک 18 ارب روپےمیونسپل کارپوریشن اسلام آباد کو دے چکے ہیں،سیکریٹری داخلہ

اس سال بھی 6 ارب روپے ایم سی آئی کو دیے،سیکریٹری داخلہ

لوکل گورنمنٹ کمیشن کا قیام عمل میں آچکا ہے،سیکریٹری داخلہ

سی ڈی اے اور ایم سی آئی کے درمیان جوتنازعات ہیں وہ لوکل گورنمنٹ کمیشن کے ذریعے ہی حل ہونگے،سیکریٹری داخلہ

ایم سی آئی کے اسٹاف کوتنخواہیں اور الاؤنسز ہم دے رہے ہیں،سیکریٹری داخلہ

ایم سی آئی کو.اپنا بجٹ بنانا تھا،انہوں نےکچھ کام نہیں کیا،سیکریٹری داخلہ

ایم سی آئی کو 10 ہزار ملازمین دیے گئے،سیکریٹری داخلہ

10ہزارملازمین اسلام آبادمیں کیا کرتے ہیں،جسٹس عمر عطا بندیال

اسلام آبادمیں ہرطرف گند پڑا ہوا ہے،جسٹس عمر عطا بندیال

آپ کو18 ارب روپے مل چکے ہیں،جسٹس اعجازالاحسن

میئرصاحب آپ اپنی پوزیشن ہمارے سامنےخود خراب کر رہے ہیں،چیف جسٹس

میئرصاحب آپ کس چیز کے انتظار میں ہیں،چیف جسٹس

کیا آپ کیلئےآسمان سے من وسلویٰ نےاترنا ہے،چیف جسٹس

آپ سنجیدہ آدمی نہیں لگ رہے،چیف جسٹس

آپ منتخب نمائندےہیں اپنی طاقت دکھانی چاہئے،چیف جسٹس

آپ کویہ رونا.زیب نہیں دیتاکہ حکومت مجھے اکاؤنٹنڈ نہیں دےرہی،چیف جسٹس

لوکل گورنمنٹ خودایک گورنمنٹ ہوتی ہے،چیف جسٹس

لوکل گورنمنٹ اپنےوسائل اور.ضروریات خود پورے کرتی ہے،چیف جسٹس

عدالت نے ایم سی آئی اور سی ڈی اے کے مابین اختیارات کی تقسیم کے معاملے کے حل کیلئے چھ رکنی کمیٹی بنا دی

وفاقی سیکرٹری خزانہ, وفاقی سیکرٹری داخلہ، چیئرمین سی ڈی اے کمیٹی میں شامل

میئر اسلام آباد ، ایڈوکیٹ جنرل اسلام آباد بھی کمیٹی میں شامل

عدالت نے مجھے اختیارات دینے کا حکم دیا حکومت عمل نہیں کر رہی، میئر اسلام آباد

آپکی دلچسپی نہیں ہے تو عہدہ چھوڑ دیں، چیف جسٹس

میئر صاحب دوبارہ الیکشن میں عوام کے سامنے کیسے جائیں گے؟ چیف جسٹس

میئر صاحب لکیر کے فقیر نہ بنیں، چیف جسٹس

آپ منتخب نمائندے ہیں جرات دکھائیں، چیف جسٹس

معلوم نہیں آپ عدالت کے علاوہ کہیں اور جاتے ہیں یا نہیں، چیف جسٹس

آپ تو زیادہ وقت پاکستان سے باہر ہی گزارے ہیں، چیف جسٹس

چھ ماہ سے بیرون ملک نہیں گیا، میئر اسلام آباد

لگتا ہے کرونا کی وجہ سے آپ پھنسے ہوئے ہیں، چیف جسٹس

نیت صاف نہ ہو تو کام نہیں ہوتے، چیف جسٹس

نعمت اللہ خان اور شجاع الرحمان لیجنڈ میئرز تھے، جسٹس عمر عطاء بندیال

ہم نے میئرز کو اپنے ہاتھ سے کام کرتے دیکھا ہے نہ کہ لیٹر بازی کرتے، جسٹس عمر عطاء بندیال

عدالت کی کمیٹی کو ایک ماہ میں میئر کے اختیارات کا مسئلہ حل کرنے کی ہدایت

کیس کی سماعت ایک ماہ کیلئے ملتوی

سی ڈی اے نے اپنی رپورٹ مطابق کسی کام کو مکمل نہیں کیا,چیف جسٹس

سی ڈی اے نے اسلام آباد میں بہنے والے چشموں کی بحالی بھی نہیں کی, چیف جسٹس

نہ سیکریٹریٹ کے سامنے پل بنا اور نہ ہی شہر میں درخت لگائے گئے, چیف جسٹس

سینٹورس مال کے ساتھ زمین کو پھر پارکنگ لیز کیلئے دے دیا گیا,چیف جسٹس

بلیو ایریا کے کسی بھی پلازے میں پارکنگ کی جگہ نہیں رکھی گئی, چیف جسٹس

سی ڈی اے یا تو تمام پلازوں کو گرا کر پارکنگ بنوائے یا کوئی اور حل نکالے, چیف جسٹس

جی سیون اور جی ایٹ انڈر پاس بن رہا ہے, چیر مین سی ڈی اے
سیکریٹریٹ پیدل چلنے والوں کیلئے بنائے جانے والا پل بھی رواں ماہ کے آخر میں مکمل ہو جائے گا,چیرمین سی ڈی اے

یہ بھی دیکھیں

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے لگا۔ 

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے