اتوار 4 شوال 1442ﻫ - 16 مئی 2021

معمر والدین اور بزرگ شہریوں کی فلاح کیلئے قانون ایوان بالا سے منظور

معمر والدین اور بزرگ شہریوں کی فلاح کیلئے قانون ایوان بالا سے منظور

سینیٹ نے”معمر والدین اور بزرگ شہریوں کی فلاح“ کا ایکٹ منظور کر لیا. پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار معمر والدین اور بزرگ شہریوں کی فلاح کیلئے جامع اقدامات تجویز کیے گئے. معمر والدین اوربزرگوں کے حقوق کے تحفظ کیلئے 6ماہ میں ویلفیئر کمیشن قائم کیا جائے گا. کمیشن  بزرگ شہریوں کی معاشرتی، ذہنی، جسمانی اور نفسیاتی بہبود کیلئے پالیسی تشکیل دے گا. کمیشن کے ممبران میں 60سال سے زائد عمر کے 3سینیٹرز، 3ممبران قومی اسمبلی، 1وزیر اور ایک سیکرٹری ہوں گے. 60سال سے زائد عمر کے بزرگ شہریوں کیلئے خصوصی کارڈکا اجراء  اور فنڈ کا قیام عمل میں لایا جائے گا. وفاقی حکومت ضرورت کے مطابق اولڈ ایج ہومز تعمیر کرے گی. بزرگوں کیلئے پارکس، لائبریری، میوزیم میں انٹری مفت ہو گی. ہسپتالوں، بینکوں اور دیگرعوامی مقامات پر ان کیلئے خصوصی کاونٹرزقائم کیے جائیں گے. والدین کی دیکھ بھال بچوں کی ذمہ داری تصور ہوگی. ماہانہ خرچہ بھی بچے یا قریبی رشتہ دار اٹھائیں گے. والدین کیساتھ توہین آمیز رویہ رکھنے والی اولاد قانون کے مطابق سزا کی مستحق ہوگی. جوائینٹ فیملی سسٹم کے انحطاط سے بزرگ شہریوں کی دیکھ بھال کا نظام متاثر ہواہے.  قرآن و احادیث کی روشنی میں والدین کا ادب و احترام اور حقوق کا تحفظ اولاد پر واجب ہے.سینیٹررانا مقبول احمد.

عام آدمی کی بھلائی اور مراعات میں اضافہ ارکان پارلیمنٹ کی اولین ترجیح ہونی چاہیے . بزرگ شہریوں کی بہبود اور ان کے حقوق کا تحفظ ریاست کی ذمہ داری ہے؛اسے ہر صورت نبھائیں گے. معمر والدین اور بزرگ شہریوں کے حقوق کو قانونی تحفظ دیا جائے گا. سینیٹر رانا مقبول احمد نے پیش کیا؛ ایوان بالا سے منظور

ایکٹ کا نام” "The Maintenance and Welfare of Old Parents and Senior Citizens Act, 2020 رکھا گیا

یہ بھی دیکھیں

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے لگا۔ 

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے