منگل 6 شوال 1442ﻫ - 18 مئی 2021

بھارت میں گاؤ کشی پر 10 سال قید کی سزا کا بل منظور ، مسلمان کے قتل عام پرمجرموں کو مل رہا ہے تحفظ

رپورٹ کے مطابق بھارت میں گائے کو تحفظ دینے کے لئے بل منظور کروانے کی کوشش جا رہی ہے لیکن مسلمانوں کا قتل عام کرنے کے لئے ہندو انتہا پسندوں کو مودی سرکار کی شہہ حاصل ہے

بھارتی ریاست اترپردیش نے گاؤکشی کے واقعات کو روکنے کے لئے قانون میں ترمیم کا فیصلہ کیا ہے، نئے قانون کے مطابق گاؤ کشی کرنے والے کو 5 لاکھ جرمانہ اور 10 سال قید کی سزا ہو گی، ریاستی کابینہ نے 1955 کے ایکٹ میں ترمیم کی منظوری دے دی ہے

بھارتی خبر رساں ادارے کے مطابق اترپردیش میں گاؤ کشی پہلی بار کرنے پر ایک لاکھ سے 3 لاکھ کا جرمانہ اور ایک سے سات سال قید کی سزا ہے، دوسری مرتبہ کرنے پر 5 سے 10 لاکھ جرمانہ اور 10 سال سزا ہو سکتی ہے

نئے ایکٹ کے تحت گائے اور دیگر مویشیوں کی غیر قانونی حمل و نقل کے معاملہ میں ڈرائیور، آپریٹر اور گاڑی کے مالک پر الزام عائد کیا جائے گا۔ایڈیشنل چیف سکریٹری برائے وزارت داخلہ اویناش کمار اوستھی کا کہنا ہے کہ کہ وزیر اعلی یوگی ادتیہ ناتھ کی صدارت میں ان کی سرکاری رہائش گاہ پر ہونے والی میٹنگ میں یہ اہم فیصلہ کیا گیا۔

واضح رہے کہ یوگی ادتیہ ناتھ مسلمانوں کے سخت خلاف ہیں،انہوں نے کئی بار بھارت سے مسلمانوں کو پاکستان جانے کا مشورہ دیا ہے، اور مسلمانوں پر سخت تنقید کرتے ہیں، اترپردیش میں گائے کی وجہ سے مسلمانوں پر ہندو انتہا پسندوں پر تشدد کے واقعات بھی زیادہ ہیں، لیکن ریاستی سرکار مجرموں کو گرفتار کرنے کی بجائے انہیں تحفظ فراہم کرتی ہے

بھارت کے سب سے زیادہ سخت گیر،ہندوتوانظریے کا حامی ومحافظ،مسلمانوں کے دشمن اترپردیش کے وزیراعلیٰ‌ یوگی ناتھ نے اعلان کیا تھا کہ مسلمان دورکے اسلامی ناموں کو ختم کرکے ہندوتواکے مطابق نام رکھے جائیں، اطلاعات کے مطابق یوگی اس سے پہلے بھی کئی نام تبدیل کرچکے ہیں

بھارتی ریاست اترپردیش کے وزیراعلیٰ‌یوگی ناتھ نے ایک بارپھر اعلان کیا ہےکہ ریاست میں مسلمان دورحکومت کے دوران جتنے بھی نام رکھے گئے ہیں ان کو فی الفورتبدیل کیا جائے،وزیراعلیٰ‌نے ریاست کے ضلع آگرہ کا نام تبدیل کرکے اگروان رکھنےکا فیصلہ کیا ہے،

یہ بھی دیکھیں

سعودی عرب: دہشت گردی میں ملوّث داعش کے پانچ مشتبہ ارکان کو سزائے موت کا حکم۔ 

سعودی عرب: دہشت گردی میں ملوّث داعش کے پانچ مشتبہ ارکان کو سزائے موت کا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے