بدھ 2 رمضان 1442ﻫ - 14 اپریل 2021

کاش آج بلاول زرداری اپنی پریس کانفرنس میں یہ بھی بتا دیتے کہ ان کی حکومت نے کورونا وائرس سے نمٹنے کے لئے کیا اقدامات اٹھائے۔ حلیم عادل شیخ


کراچی (پریس ریلیز تاریخ 2020-06-20) پاکستان تحریک انصاف کے مرکزی نائب صدر و سندھ اسمبلی میں پارلیمانی لیڈر حلیم عادل شیخ نے بلاول زرداری کی پریس کانفرنس پر رد عمل دیتے ہوئے اپنے وڈیو بیان میں کہا ہے کہ بلاول زرداری کی آج کی پریس کانفرنس وفاق پر الزامات کا پلندہ کے سوا کچھ نہیں ہے، کاش آج بلاول زرداری یہ بھی بتا دیتے کہ ان کی حکومت نے کرونا سے نمٹنے کے لئے کیا اقدامات کئے۔ وزیر اعظم کے لاڑکانہ کے دورے کو سیاسی کہنے سے پہلے بلاول زرداری کو سوچنا چاہیے تھا۔ وزیر اعظم عمران خان نے احساس کیش ایمرجنسی پروگرام کے تحت سندھ کے پچاس لاکھ لوگوں کو ساٹھ ارب دیئے ہیں، لاڑکانہ کے ایک لاکھ پچاسی ہزار لوگوں کو دو ارب بیس کروڑ روپے دیئے جارہے ہیں ایک لاکھ پندرہ ہزار لوگوں کو مل چکی ہے۔ عمران خان لاڑکانہ میں سیاست کرنے نہیں گئے تھے عوام کی امداد کرنے گئے تھے۔ آپ کی حکومت نے لاڑکانہ کی عوام کو ایڈز کا تحفہ دیا گیا لوگوں کو کتوں سے کٹوا یا گیا، لاڑکانہ کی عوام کو صحت کی سہولیات آپ لوگوں نے نہیں دی نہ تعلیم بہتر کی گئی، بلاول زرداری نے این ایف سے اور پی ایف سی کی بات کی ہے اب کہہ رہے ہیں کہ ہم پی ایف کو دینے کا سوچ رہے ہیں۔12 سال گذرنے کے بعد آج بلاول زرداری کہہ رہے ہیں کہ پی ایف سی دینے کا سوچ رہے ہیں۔ یہ دہرا معیار سندھ کی عوام سے بلاول کی حکومت کر رہی ہے۔ پی ٹی آئی پر سیاسی بیان بازی کے الزامات لگانے سے پہلے جواب دیا جائے ہر روز سندھ اسمبلی میں پریس کانفرنس میں سیاسی پوائنٹ اسکورنگ کیوں کی جاتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا سپریم کورٹ کے احکامات پر اسپتالیں وفاق کو واپس دینا سندھ پر حملہ کہنا بلاول زرداری جیسے لیڈر کو زیب نہیں دیتا، سپریم کورٹ کے احکامات کو سندھ کی اسپتالوں پر حملہ کہنا یہ نفرت پھیلانے والی بات ہے، بلاول زرداری بتائیں سندھ کے تعلقہ لیول کے اسپتال بھی آپ کی سندھ حکومت نے این جی اوز کے حوالے کر رکھی ہیں یہ بڑی اسپتال آپ کیسے چلائیں گے، آپ کی حکومت میں سندھ کی عوام کو کتوں کے کاٹنے سے بچائو کی ویکسین تک نہیں ملتی۔ وزیر اعظم عمران خان لاڑکانہ میں احساس سینٹر پر غریب عوام سے ملے تھے، بلاول زرداری بتائیں کبھی کسی غریب سے ملنے کے لئے گئے ہیں ان لوگوں کو غریبوں کو احساس نہیں ہے۔ بلاول زرداری چاندی کا چمچہ لیکر پیدا ہوئے ہیں انکو غربت اور غریب کا کوئی احساس نہیں ہے۔ دوسری جانب وفاق کو سندھ کے تین ہسپتال حوالے نہ کرنے کے صوبائی حکومت کے خط پر حلیم عادل شیخ کا ردعمل دیتے ہوئے کہا صوبائی وزیر صحت عذرا پیچوہو صاحبہ نے وفاق کو خط لکھ کر کہا ہے کراچی کے تین بڑے اسپتال وفاق کے حوالے نہیں کریں گے۔ وزیر صاحبہ نے لکھا ہے کہ اگر وفاق کو اسپتال چاہئیں تو دس سال میں ہم نے خرچ کیا ہے وہ واپس کیا جائے۔ وزیر اعظم سے اپیل ہے دس سال کا پہلے فرانزک آڈٹ کرایا جائے۔ دودہ کا دوہ پانی کا پانی ہوجائے گا اربوں کی کرپشن کی گئی ہے۔ این آئی سی وی ڈی میں اربوں کی بقایاجات ہے جو انہوں نے ادھار لی ہے۔ آپ لوگ لوکل اسپتال چلا نہیں سکتے یہ بڑے اسپتال کیسے چلائیں گے۔ سندھ کے اسپتال این جی او کے حوالے کئے گئے ہیں۔ سندھ میں صحت کا نظام تباہ کر دیا گیا ہے۔ ہیلتھ کا ساڑے پانچ ہزار ارب بجیٹ ہونے کے باوجود کرپش کی گئی۔ 18ترمیم سے پہلے یہ اسپتال وفاق کے پاس تھے۔ سپریم کورٹ کے حکم پر دوبارہ یہ اسپتال وفاق کو دی گئی ہیں۔ ان اسپتالوں کا دس سال کا آڈٹ کرایا جائے تاکہ پیپلزپارٹی کی کرپشن سامنے لائی جائے

یہ بھی دیکھیں

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے لگا۔ 

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے