منگل 29 رمضان 1442ﻫ - 11 مئی 2021

  محسن عزیز کی زیر صدارت سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے پیٹرولیم کا اجلاس

مقامی گیس پیداوار کم جب کہ طلب بڑھ رہی ہے اس لیے  اگلی سردیوں میں بھی گیس لوڈشیڈنگ رہے گی ملک میں گیس کی مکمل طلب ساڑھے 7 ارب مکعب فٹ یومیہ تک ہے، مگر گیس کی قلت ساڑھے 3 ارب مکعب فٹ یومیہ ہے۔ سندھ سے نکلنے والی گیس میں سے 1 ارب 56 کروڑ مکعب فٹ گیس یومیہ سندھ میں ہی استعمال ہوتی ہے، جب کہ سندھ کی صرف 26 کروڑ 10 لاکھ مکعب فٹ یومیہ گیس پنجاب کو جاتی ہے لیکن اگلے سال تک سندھ کے پاس بھی کسی کو دینے کے لیے گیس نہیں ہو گی، یہاں تک کہ سندھ کی گیس کی اپنی ضرورت بھی پوری نہیں ہوگی۔گیس قلت سے متعلق تمام صوبوں نے مل کر فیصلہ کرنا ہے، تمام صورتحال مشترکہ مفادات کونسل میں زیر بحث آچکی ہے اور  مشترکہ مفادات کونسل نے صوبوں کوگیس قلت کے مسئلے اور حل پر زور دیا ہے۔ہم نے ملک میں تیل اور گیس کی تقسیم کے لیے 10 لائسنس جاری کیے ہیں،عمر ایوب

سندھ ہر غیر آئینی اقدامات کی مخالفت کرے گا،سینیٹر سسی پلیجو

گیس تقسیم سے متعلق آئین کے آرٹیکلز  پر عملدرآمد نہیں ہو رہا، اس کی تقسیم سے متعلق آئین کے آرٹیکلز  158 اور  172 پر عملدرآمد کیا جائے۔ بلوچستان اور سندھ سےگیس نکلے اور وہاں کے عوام کو نا ملے تو احساس محرومی بڑھے گا،سینیٹر میر کبیر شاہی

یہ بھی دیکھیں

وزارتِ مذہبی امور نے کرونا وبا ء کےسلوگن کے حوالے سے نوٹیفکیشن جاری کردیا۔  حکام مذہبی امور

وزارتِ مذہبی امور نے کرونا وبا ء کےسلوگن کے حوالے سے نوٹیفکیشن جاری کردیا۔  حکام …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے