اتوار 29 شعبان 1442ﻫ - 11 اپریل 2021

شہریار خان آفریدی کا کہنا ہے کہ بھارت کے توسیع پسندانہ ڈیزائن علاقائی ترقی میں سب سے بڑی رکاوٹ ہیں۔

شہریار خان آفریدی کا کہنا ہے کہ بھارت کے توسیع پسندانہ ڈیزائن علاقائی ترقی میں سب سے بڑی رکاوٹ ہیں۔

اسلام آباد – چیئرمین پارلیمانی کمیٹی برائے کشمیر شہریار خان آفریدی نے جمعرات کے روز کہا کہ ہندوستانی توسیع پسندانہ ڈیزائن جنوبی ایشیاء کے خطے میں امن و ترقی کی راہ میں ایک بہت بڑی رکاوٹ ہے اور علاقائی ممالک کو مودی حکومت کے توسیع پسندانہ ڈیزائنوں کے خلاف متحد ہونے کی ضرورت ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے زراعت یونیورسٹی ملتان میں ‘یوتھ کانفرنس فار کاؤنٹر ایکسٹریم بہیور’ کے عنوان سے ملتان میں منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔
شہریار آفریدی نے کہا کہ گذشتہ کئی دہائیوں سے بھارتی حکومت کی طرف سے جاری جابرانہ ہتھکنڈوں کے باوجود پیشہ ورانہ حکومت جموں و کشمیر کے عوام کے  عزم کو توڑنے میں ناکام رہی۔  انہوں نے کہا کہ کشمیری خواہ پاکستان کے ساتھ رہنا چاہیں یا ہندوستان وہ آزاد اور شفاف رائے شماری کے ذریعے اپنی تقدیر کا فیصلہ کریں گے۔ برطانیہ کے فوجی سربراہ جنرل سر نک کارٹر کے تیسرے عالمی جنگ کا خطرہ حقیقی ہونے کے بیان کا حوالہ دیتے ہوئے آفریدی نے کہا کہ اگر تنازعہ کو خوش اسلوبی سے حل نہ کیا گیا تو پاکستان اور بھارت ایٹمی جنگ کا رخ کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ اور دنیا کو تنازعہ کشمیر کے حل کے لئے فوری طور پر عملی اقدامات کرنے کی ضرورت ہے تاکہ خطے میں جوہری جنگ سے بچنے میں مدد ملے جہاں پاکستان ، بھارت اور چین تین جوہری پڑوسی سرحدی تنازعات میں ملوث ہیں۔

آفریدی نے کہا کہ پاکستان اور بھارت نے کشمیر پر دو محدود جنگوں کے علاوہ تین جنگیں لڑی ہیں۔انہوں نے کہا کہ چین اور بھارت کشمیر میں ایک اور سرحدی تنازعہ میں ملوث ہیں۔ اُنہوں نے کہا کہ جوہری جنگ کی دھمکی اب حقیقی ہے۔چیئرمین کشمیر کمیٹی نے کہا کہ بھارتی مقبوضہ جموں و کشمیر میں ہندوستانی پیشہ ورانہ حکومت خوفزدہ ہے کہ اس نے جموں وکشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے انتخابات پر پابندی عائد کردی ہے اور کہ پہلے اپنے آئین کے بارے میں وضاحت پیش کریں جس میں کہا گیا ہے کہ جموں و کشمیر  متنازعہ علاقہ ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ ایسے حربے ناکام ہوجائیں گے کیونکہ جموں و کشمیر کے عوام نے بھارتی قبضے سے آزادی کے لئے کسی بھی قربانی کیلئے تیار ہیں۔انہوں نے کہا کہ نہ تو کشمیری عوام تنازعہ کو اقوامِ متحدہ میں لے کر گئے اور نہ ہی پاکستان بلکہ یہ ہندوستانی وزیر اعظم جواہر لال نہرو تھے جو مسئلہ کشمیر کو اقوامِ متحدہ میں لے کر گئے اور مداخلت کا مطالبہ کیا۔اُنہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کی درجنوں قراردادیں ہیں جن میں جموں و کشمیر کی تقدیر کا فیصلہ کرنے کے لئے ریفرنڈم کروانے کا مطالبہ کیا گیا ہے لیکن بھارت اس عمل میں تاخیر کا مرتکب ہے۔

آفریدی نے کہا کہ ہندوستانی مقبوضہ جموں وکشمیر میں بھارتی پیشہ ور قوتیں بدترین جنگی جرائم کی مرتکب ہیں۔آفریدی نے کہا کہ ہندوتوا حکومت میڈیا کی آوازوں کو دبانے کے لیے ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں لیکن بہادر کشمیری صحافی جموں و کشمیر کی تاریخ میں مزاحمت کا نیا باب لکھ رہے ہیں۔انہوں نے اقوام متحدہ کے انسانی حقوق اور اظہار رائے کی آزادی کے ماہرین سے مطالبہ کیا کہ وہ بھارتی مقبوضہ جموں و کشمیر میں لاکھوں کنال اراضی کی غیر قانونی منتقلی میں ہندوستانی حکومت کی فوری مزاحمت کرے۔انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں ہندوستان کے تمام اقدامات غیر قانونی ہیں اور تنازعہ کشمیر سے متعلق اقوام متحدہ کی قراردادوں کی صریح خلاف ورزی ہے اور ان کا مقصد کشمیریوں کی نسل کشی ہے۔آفریدی نے اقوام متحدہ کے ماہرین سے مطالبہ کیا کہ وہ بھارت کے مقبوضہ جموں و کشمیر میں سرگرم انسانی حقوق کے محافظوں ، صحافیوں اور سول سوسائٹی کے ممبروں ، شہری امدادی تنظیموں کے دفاتر اور رہائش گاہوں پر ہندوستان کی قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے) کے غیر قانونی چھاپوں کا نوٹس لیں۔

انہوں نے کہا کہ این آئی اے گذشتہ سال 28 اکتوبر سے ہی انسانی حقوق کی تنظیموں کے کارکنوں اور صحافیوں میں خوف پیدا کررہا ہے تاکہ میڈیا اور انسانی حقوق کی تنظیمیں کشمیریوں کے خلاف بھارت کی نسل کشی کے اقدامات کے بارے میں خبر دنیا تک نہ پہنچنے دیں۔”بھارت کی ہندوتوا حکومت میڈیا اور انسانی حقوق کی تنظیموں کی آواز کو گھونٹ کر کشمیر میں جاری نسل کشی کو چھپانا چاہتی ہے۔ ایمنسٹی انڈیا کو گذشتہ ماہ بھارت میں اپنی کاروائیاں بند کرنے پر مجبور کیا گیا تھا۔ ایمنسٹی انٹرنیشنلانسانی حقوق کی تنظیمیں اور میڈیا نے بھی ہندوستانی حکومت کے خلاف جاری مہم کی مذمت کی ہے – شہریار خان آفریدی

شہریار آفریدی نے کہا کہ مودی حکومت کو یہ سمجھنا چاہئے کہ اس طرح کے چھاپوں اور خوف کے ماحول سے سچائی کو چھپایا نہیں جاسکتا۔ انہوں نے کہا کہ آر ایس ایس کے غنڈے اور مودی انتظامیہ کشمیریوں کی نسل کشی پر دنیا کو بے وقوف نہیں بناسکتی۔  انہوں نے کہا کہ ہم کشمیر میں نوآبادیاتی حکمرانوں کی غیر انسانی حرکتوں کو بے نقاب کرتے رہیں گے۔  انہوں نے کہا کہ دنیا کو اپنی مجرمانہ خاموشی کو توڑنا اور کشمیریوں کو آزادی دلانا ہوگی۔انہوں نے کہا کہ قومیں اس وقت تشکیل پاتی ہیں جب وہ اپنی بنیاد سے جڑ جاتے ہیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ کشمیری بھی اپنی جڑوں سے جُڑے ہوئے ہیں۔ "ہم اپنے ہیروز کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔  ہمارے ہیرو ہر شعبے میں نمایاں کام انجام دے رہے ہیں۔  ڈاکٹروں ، پیرا میڈیکل اسٹاف اور مسلح افواج کو سلام پیش کرتا ہوں جو وزیر اعظم عمران خان کے وژن اور حکمت عملی کے تحت کورونا وائرس کو شکست دینے میں اہم کردار ادا کر رہے ہیں” – شہریار خان آفریدی

یہ بھی دیکھیں

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے لگا۔ 

وزیراعظم عمران خان کا بے گھر افراد کو چھت کی فراہمی کا وعدہ پورا ہونے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے